بین الاقوامی

  • بین الاقوامی
  • Sep 21, 2020

بھارتی پارلیمنٹ میں کسانوں کے حقوق کیلئے آواز اٹھانے پرحزب اختلاف کے آٹھ ارکان کی رکنیت ایک ہفتے کیلئے معطل

بھارتی پارلیمنٹ میں کسانوں کے حقوق کیلئے آواز اٹھانے پرحزب اختلاف کے آٹھ ارکان کی رکنیت ایک ہفتے کیلئے معطل کردی گئی ہے۔راجیہ سبھا کے اجلاس میں تین بلوں کی منظوری دی گئی تھی ۔وزیر اعظم نریندر مودی نے کہا تھا کہ زرعی شعبےمیں بڑے پیمانے پر اصلاحات کی جار ہی ہیں جس سےلاکھوں کسانوں کو بااختیار بنایا جائے گا۔ان متنازعہ بلوں کے خلاف اپوزیشن ارکان نے ایوان میں بل کی کاپیاں پھاڑیں اور مائیکروفون توڑے تھے۔شدید ہنگامہ آرائی کے بعدچیئرمین کواجلاس ملتوی کرنا پڑا،۔
غربت اور جہالت کے باعث بھارت میں کروڑوں لوگ جانوروں جیسی زندگی گذارنے پر مجبور ہیں۔ستر فیصد لوگ دیہات میں رہتے ہیں جن کی اکثریت کھیتی باڑی پر گزارہ کرتی ہے،۔لیکن شدید بدحالی کے باعث حالیہ برسوں میں ہزاروں کسانوں نے خود کشی کر کے اپنی زندگیوں کا خاتمہ کر لیا۔کانگریس کے رہنما راہول گاندھی نے ارکان کی معطلی کو بی جے پی حکومت کا فسطائی ہتھکنڈہ قرار دیتے ہوئےفوفی بحالی کا مطالبہ کیا ہے