بین الاقوامی

  • Jun 11, 2021

افغانستان میں شدید لڑائی ،طالبان کی پیش قدمی : فوجی اور انتظامی افسر بھی طالبان سے ملنے لگے،کابل انتظامیہ کی امریکہ سے مدد کی اپیل

افغانستان میں ایک طرف غیر ملکی فوجیں اپنا سامان سمیٹ کر روانہ ہو رہی ہیں تو دوسری جانب طالبان تیزی سے پیش قدمی کرتے ہوئے کابل کی طرف بڑھ رہے ہیں ۔افغان ذرائع ابلاغ کے مطابق تیس کے قریب صوبوں میں شدیدلڑائی جار ی ہے۔قندھار،روزگان، بادغیس ،نیمروز، بدخشان ،پکتیا، لوگراور قندوز میں طالبان نے کئی فوجی اڈوں اور اہم چوکیوں پر قبضہ کر لیا ہے۔طالبان نے د عویٰ کیا ہے کہ گزشتہ تین روز کے دوران کئی اعلیٰ افسروں سمیت سینکڑوں فوجیوں اور پولیس اہلکاروں نے ہتھیار ڈال دیئے ہیں۔جبکہ مزاحمت کرنیوالے سینکڑوں فوجی مارے گئے۔امارات اسلامیہ افغانستان نے اپنی ویب سائیٹ پر دعویٰ کیا ہے کہ طالبان نے درجنوں ٹینک،فوجی گاڑیاں اور بہت بڑی تعداد میں بھاری اسلحہ قبضے میں لے لیا ہے۔ خبر ایجنسی طلوع کے مطابق بغلان صوبےکے فوجی اڈے کے قریب بم حملے میں چھ فوجی ہلاک اور دس زخمی ہو گئے ہیں،۔دریں اثنا افغان حکومت نے امریکہ سے درخواست کی ہے کہ وہ انہیں طالبان کے بڑھتے حملوں سے بچانے کیلئےجنگی طیاروں یا ڈرون کے ذریعےمدد کرے۔تاہم امریکہ کی جانب سے اس سلسلے میں ابھی کوئی جواب موصول نہیں ہوا۔